شاعری

ایک حسرت

۔۔ ثریا بابر صبر کا پھل میٹھا ہوتا ہے ۔۔۔ اور ڈاکٹر نے مجھے میٹھا کھانے سے منع کیا ہے ۔۔ سو شب بخیر زندگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مٹھاس

موقع ملے جسے بھی وہ پیتا ضرور ہے شاید بہت مٹھاس ہمارے لہو میں ہے انتخاب۔۔ ثریا بابر۔۔۔۔۔

فون سے ملاقات تک

ثریا بابر جس کی آواز ہے اتنی پیاری خو د و ہ کتنی پیاری ہوگی بالوں کا اک جوڑا ہو گا صندل تن پہ ساری ہوگی پھولوں جیسی ہلکی پھلکی بات بھی لب پہ جاری ہوگی لیکن یہ بھی کس۔۔۔۔۔

نظم ۔۔۔۔ بچھڑنے کے بعد

ثریا بابر کراچی جب ساتھ کسی کا چھوٹے تو دل ٹوٹا ٹوٹا رہتا ہے   ہر شام اس دل کی نگری میں ارماں کا تماشا لگتا ہے اب آج ابھی پیغام آئے جو شاید میرے نام آئے   ہر آہٹ۔۔۔۔۔

برسوں بعد تجھ سے ملاقات خوب رہی

برسوں بعد تجھ سے ملاقات خوب رہی وصل کی از سر نو شروعات خوب رہی ایک چھتری برستا ساون تو اور میں کل شب جو برسی برسات خوب رہی تیرے دل کی گفتگو میری دھڑکن نے سنی خاموشی میں ہوئی۔۔۔۔۔

نعت شریف

(احمد نثار، ممبئی، مہاراشٹر) فرشتوں کا ایک جھنڈ سفر پر نکل پڑا! کہکشانوں سے ہوتا ہوا دودھیا راستوں سے گذرتا ہوا بروجوں سے ستاروں کی دنیا سے راستہ کرتا ہوا لا کے فلک سے اِلہ کے سماں تک تیرتا ہوا کہیں۔۔۔۔۔

اے وطن مری جنت ہے تُو

اے وطن مری جنت ہے تُو عظمتوں کی علامت ہے تُو جس پہ نازاں ہے دنیا تمام وہ سراپا محبت ہے تُو تری مٹی کے سونے کے رنگ ساری دنیا کی نزہت ہے تُو وادیاں تری جنت نشاں کس قدر۔۔۔۔۔

چراغِ مردہ سے امیدِ انقلاب نہیں

کھلا ہے شمس کہ اس پر کوئی نقاب نہیں حقیقتوں کا ہے منظر کوئی سراب نہیں ہمارے دن میں اندھرا ہے آفتاب نہیں ہماری شام کے حق میں بھی ماہتاب نہیں یہ سیدھا سادھا سا فطرت کا اک تقاضا ہے۔۔۔۔۔

اُسی کے نور سے ہم انحراف کر بیٹھے

کبھی غرور پہ ہم اعتراف کر بیٹھے محبتوں سے کبھی اختلاف کر بیٹھے کبھی دھنک کے بدن پر لحاف کر بیٹھے کبھی مہک کی روش پر غلاف کر بیٹھے ہمارے چہرے پڑھے انکشاف کر بیٹھے اُن آئینوں کی خرد پر۔۔۔۔۔