شاعری

مشاعرہ

ہائے وہ لوگ ہمیں جان سے پیارے ہونگے جو تمھارے نہ ہوئے خاک ہمارے ہونگے ان گستاخ نگاہوں کا گلہ کیا صاحب ہم سے مت پوچھئیے نہ زخم ادھارے ہونگے ہائے کس زعم میں گم پھرتے ہیں یارانِ وفا ہم۔۔۔۔۔

خراج تحسین !

خراج تحسین ! —مختصر تعارف و سوانحی خاکہ — زیب انساء زیبی —– سابق افسرِ ِ اطلاعات محکمہ ِ اطلاعات حکومت سندھ شاعرہ افسانہ نگار کالم نویس محقق و مترجم ناولسٹ ماہر تعلیم زیب انساء زیبی 3 جولائ 1958 کو۔۔۔۔۔

اب ترے لہجے کی پہلی سی حلاوت کیا ہوئی

غزل اب ترے لہجے کی پہلی سی حلاوت کیا ہوئی جس سے ٹوٹا دل کسی کا وہ خطابت کیا ہوئی ہر تعلق کی بھی اپنی اک الگ پہچان ہے سوچتے ہیں کہ زبردستی کی نسبت کیا ہوئی خواب تو پھر۔۔۔۔۔

اظہار تشکر و خراج تحسین !

اشعار ! نظر انداز کرنے کی سزا دینا تھی تجھ کو تیرے دل میں اتر جانا ضروری ہو گیا تھا ، کھلنے لگے ہیں مجھ پہ سب اسرار کائنات حسرت سرائے عشق کی جانب رواں ہوں میں ، سبھی حریفوں۔۔۔۔۔

گھر تو ہوتا مکان کا کیا ہے

مبارکباد ۔! گھر تو ہوتا مکان کا کیا ہے بھاڑے پر بھی رہا جا سکتا ہے دوستوں کا مزاج کیا کہٕیے کوٕئی صحرا ہے کوٕئی دریا ہے لوگ کیا کیا نصیب رکھتے ہیں اپنے حصے میں بس تماشا ہے أصف۔۔۔۔۔

نہیں آنا کہ اب آوازِ پا سے چوٹ لگتی ہے

نہیں آنا کہ اب آوازِ پا سے چوٹ لگتی ہے مرے احساس پر تیری صدا سے چوٹ لگتی ہے تجھے خود اپنی مجبوری کا اندازہ نہیں شاید نہ کر عہد وفا ُ عہد وفا سے چوٹ لگتی ہے یہ سب۔۔۔۔۔

ایک وین (زبانی اجمل ہارون )

اک وین ! میں کملی تے بختاں ماری شرم ، حیا وی تیتھوں واری کج ، کج رکھدی اپنا آپے میرا ای اندر مینوں چاکے چن وی اج تے گھورن لگا سفنے ، میرے پورن لگا پلے اڈ ، اڈ۔۔۔۔۔

دلِ من مسافرِ من

مرے دل، مرے مسافر ہوا پھر سے حکم صادر کہ وطن بدر ہوں ہم تم دیں گلی گلی صدائیں کریں رُخ نگر نگر کا کہ سراغ کوئی پائیں کسی یارِ نامہ بر کا ہر اک اجنبی سے پوچھیں جو پتا۔۔۔۔۔

ویران اندر سے کر رہا ہے کوئی

(خالد راہی (غزل ویران اندر سے کر رہا ہے کوئی مجھ سا مجھ میں اتر رہا ہے کوئی وقت سا تحلیل ہوا چاہتا ہے خاموش جان سے گزر رہا ہے کوئی ساتھ چلنے کا وعدہ تو کر لیا تھا سفرطویل۔۔۔۔۔

کتھے مہر علیؔ کتھے تیری ثناء

  اَج سک متراں دی ودھیری اے کیوں دلڑی اداس گھنیری اے لوں لوں وچ شوق چنگیری اے اج نیناں لائیاں کیوں جھڑیاں اَلْطَّیْفُ سَریٰ مِنْ طَلْعَتِہٖ والشَّذُو بَدیٰ مِنْ وَفْرَتَہٖ فَسَکَرْتُ ھُنَا مِنْ نَظْرَتِہٖ نیناں دیاں فوجاں سر چڑھیاں۔۔۔۔۔