شاعری

سمندر میں اترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Poet: Wasi Shah سمندر میں اترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں تری آنکھوں کو پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں تمہارا نام لکھنے کی اجازت چھن گئی جب سے کوئی بھی لفظ لکھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی۔۔۔۔۔

Qaatil قاتل – Urdu Poem – Zulqarnain Hundal

اس سے بڑی سفاکی کیا بتاؤں آدمی ہی انسانیت کا قاتل نکلا تڑپا تڑپا کر سسکا سسکا کر مارا جس نے بھائی ہی بہن کا قاتل نکلا تیرے دیس کی مٹی کی وفا کو کیا ہوا اس دیس کی مٹی۔۔۔۔۔

ڈوبا مرے نصیب کا تارا کہیں جسے

ڈوبا مرے نصیب کا تارا کہیں جسے وہ حال دل ہوا ہے کہ ہارا کہیں جسے جس کے حضور سر جھکا میرے حضور کا ہوں خاک اس دیار کی یارا کہیں جسے پوچھو نہ حال دل مرا تم اے ستم۔۔۔۔۔

تازہ کلام آپکی بصارتوں کی نظر

حیاتِ فانی میں رنج و الم نہیں ہوتا ہمارے دل میں اگر تیرا غم نہیں ہوتا کوئی تو بات ہے اُس بےوفا کے لہجے میں ہماری آنکھ کا کونہ یوں نم نہیں ہوتا بچھڑتے وقت اگر مسکرا کے چل دیتے۔۔۔۔۔

مشاعرہ

ہائے وہ لوگ ہمیں جان سے پیارے ہونگے جو تمھارے نہ ہوئے خاک ہمارے ہونگے ان گستاخ نگاہوں کا گلہ کیا صاحب ہم سے مت پوچھئیے نہ زخم ادھارے ہونگے ہائے کس زعم میں گم پھرتے ہیں یارانِ وفا ہم۔۔۔۔۔

خراج تحسین !

خراج تحسین ! —مختصر تعارف و سوانحی خاکہ — زیب انساء زیبی —– سابق افسرِ ِ اطلاعات محکمہ ِ اطلاعات حکومت سندھ شاعرہ افسانہ نگار کالم نویس محقق و مترجم ناولسٹ ماہر تعلیم زیب انساء زیبی 3 جولائ 1958 کو۔۔۔۔۔

اب ترے لہجے کی پہلی سی حلاوت کیا ہوئی

غزل اب ترے لہجے کی پہلی سی حلاوت کیا ہوئی جس سے ٹوٹا دل کسی کا وہ خطابت کیا ہوئی ہر تعلق کی بھی اپنی اک الگ پہچان ہے سوچتے ہیں کہ زبردستی کی نسبت کیا ہوئی خواب تو پھر۔۔۔۔۔

اظہار تشکر و خراج تحسین !

اشعار ! نظر انداز کرنے کی سزا دینا تھی تجھ کو تیرے دل میں اتر جانا ضروری ہو گیا تھا ، کھلنے لگے ہیں مجھ پہ سب اسرار کائنات حسرت سرائے عشق کی جانب رواں ہوں میں ، سبھی حریفوں۔۔۔۔۔

گھر تو ہوتا مکان کا کیا ہے

مبارکباد ۔! گھر تو ہوتا مکان کا کیا ہے بھاڑے پر بھی رہا جا سکتا ہے دوستوں کا مزاج کیا کہٕیے کوٕئی صحرا ہے کوٕئی دریا ہے لوگ کیا کیا نصیب رکھتے ہیں اپنے حصے میں بس تماشا ہے أصف۔۔۔۔۔

نہیں آنا کہ اب آوازِ پا سے چوٹ لگتی ہے

نہیں آنا کہ اب آوازِ پا سے چوٹ لگتی ہے مرے احساس پر تیری صدا سے چوٹ لگتی ہے تجھے خود اپنی مجبوری کا اندازہ نہیں شاید نہ کر عہد وفا ُ عہد وفا سے چوٹ لگتی ہے یہ سب۔۔۔۔۔