نفرتوں کو بھول جانا چاہیے غیر کو اپنا بنانا چاہیے

نفرتوں کو بھول جانا چاہیے،
غیر کو اپنا بنانا چاہیے
مختصر ہے زندگی کا کارواں،
یار ہر پل مسکرانا چاہیے.
گر کسی میں عیب کوئی دیکھ لیں،
عیب دل میں ہی چھپانا چاہیے.
قول پہ قائم رہو اے دوستو،
عہد و پیماں کو نبھانا چاہیے.
پیٹھ پیچھے بات کرنا چھوڑ دیں،
نار سے خود کو بچانا چاہیے.
دشمنوں کو دوستی سے جیت لیں،
دشمنی کو بھول جانا چاہیے.
بانٹنے سے درد شاید دور ہوں
ہر کسی کا غم بٹانا چاہیے.
ہے اصول _زندگی یہ دوستو،
چوٹ کھا کر مسکرانا چاہیے.
یہ دعا راشد میری منظور ہو،
ہر بشر کو مسکرانا چاہیے.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *